Urdu

اُن خواتین کے بچے خواجہ سراءپیدا ہوتے ہیں

ایک نئی تحقیق نے ہنگامہ برپا کر دیا اس بات سے تو آپ باخوبی واقف ہی ہوں گے مشرقی ممالک میں خواتین کا مغربی پہناوا اکثر موضوع بحث رہتا ہے اور قدامت پسند حلقے اس پر شدید تنقید کرتے آ رہے ہیں۔ اب بھارت کے ایک پروفیسر نے خواتین کے جینز پہننے کے متعلق ایسی بات کہہ دی ہے کہ ملک بھر میں ہنگامہ برپا ہو گیا۔

انڈیا ٹوڈے کی رپورٹ کے مطابق بھارتی ریاست کیرالا کے شہر کلاڈے میں واقع شری شنکر کالج کے پروفیسر ڈاکٹر رجنیتھ کمار نے لائیو ٹی وی شو میں کہا ہے کہ ”جو خواتین جینز کی پینٹ پہنتی ہیں وہ خواجہ سراؤں کو جنم دیتی ہیں۔“ یہی نہیں بلکہ ڈاکٹر رجنیتھ کے مطابق ایسی خواتین کے ہاں پیدا ہونے والے بچے خودفکری (Autism)کی بیماری میں بھی مبتلا ہو تے ہیں۔نباتیاتی سائنس کے پروفیسر رجنیتھ کا کہنا تھا کہ ”اگر ایک عورت مردوں جیسا لباس پہنتی ہے تو اس کے ہاں پیدا ہونے والے بچوں کی جنس کیا ہو گی؟ ایسی خواتین کے ہاں پیدا ہونے والے بچے خواجہ سراءاور ہیجڑے کہلاتے ہیں۔

جب کوئی خاتون اپنی نسوانیت اور کوئی مرد اپنی مردانگی کی ہتک کرتا ہے تو ان کے ہاں پیدا ہونے والی بیٹی مردوں کی خصوصیات کی حامل ہو گی اور یہ بیٹی آگے جن بچوں کو جنم دے گی وہ خواجہ سراءہوں گے۔“ڈاکٹر رجنیتھ کا کہنا تھا کہ ”ان کا یہ دعویٰ سائنسی تحقیق اور سالوں کے تجربے پر مبنی ہے جسے جھٹلایا نہیں جا سکتا۔“نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہا رکیجئیے

Comments

comments

اُن خواتین کے بچے خواجہ سراءپیدا ہوتے ہیں
Click to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

To Top