Urdu

مسلمان نوجوان نے ایک ہندو کی جان بچانے کے لئے اپنا روزہ توڑ دیا

جب ڈاکٹر نے اسے خون عطیہ کرنے سے پہلے کچھ کھانے کے لیے کہا تو عارف نے بتایا کہ وہ روزہ سے ہے۔ لیکن ڈاکٹر نے بغیر کچھ کھائے پیے خون لینے سے منع کر دیا۔ ایسی صورت میں عارف نے اجے کی زندگی بچانے کی خاطر اپنا روزہ توڑ دیا اور اجے کے ساتھ ساتھ انسانیت کو بھی زندگی عطا کی۔


دہرا دون:20 سالہ اجے بجلوان کی طبیعت اچانک بے حد خراب ہو گئی تھی۔ اس کے لیور میں انفیکشن ہو گیا تھا جس کی وجہ سے اسے دہرہ دون واقع میکس اسپتال کے آئی سی یو میں داخل کرایا گیا۔ ڈاکٹروں کا کہنا تھا کہ اجے کو خون کی سخت ضرورت ہے کیونکہ لیور میں انفیکشن کی وجہ سے اس کے خون میں پلیٹلیٹس کی تیزی کے ساتھ کمی ہو رہی تھی۔
قومی آواز کی رپوٹ کے مطابق اجے کے والد بہت پریشان تھے کیونکہ اجے کو A+ خون چاہیے تھا جو بہت تلاش کرنے کے بعد بھی نہیں مل رہا تھا۔ ایسے وقت میں ایک مسلم روزے دار

عارف خان فرشتہ بن کر ان کے پاس پہنچا اور خون دے کر اجے کی جان بچائی۔عارف کے اجے تک پہنچنے کا مرحلہ اتناآسان نہیں تھا اور وہ بھی تب جب کہ عارف اور اجے کے درمیان پہلے سے کوئی جان پہچان نہیں تھی۔ وہ تو سوشل میڈیا تھا جس نے عارف تک یہ خبر پہنچائی کہ اجے نام کے کسی شخص کو A+ خون کی ضرورت ہے اور عارف بغیر یہ سوچے کہ اس کا روزہ ٹوٹ جائے گا، اجے کی مدد کرنے کے لیے اسپتال کی طرف بھاگا۔ اسپتال پہنچنے کے بعد جب ڈاکٹر نے اسے خون عطیہ کرنے سے پہلے کچھ کھانے کے لیے کہا تو عارف نے بتایا کہ وہ روزہ سے ہے۔ لیکن ڈاکٹر نے بغیر کچھ کھائے پیے خون لینے سے منع کر دیا۔ ایسی صورت میں عارف نے اجے کی زندگی بچانے کی خاطر اپنا روزہ توڑ دیا اور اجے کے ساتھ ساتھ انسانیت کو بھی زندگی عطا کی۔

Comments

comments

مسلمان نوجوان نے ایک ہندو کی جان بچانے کے لئے اپنا روزہ توڑ دیا
Click to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

To Top