Urdu

کسی منظر کو دیکھنےکے بعد ایسا کیوں‌لگتا ہے کہ یہ منظر پہلے بھی ہم دیکھ چکے ہیں‌

شاید ہم میں‌سے اکثر کے ساتھ ایسا ہوتا ہوگا کہ ہم کہیں‌گئے یا ہمارے سامنے کوئی کام ہو رہاہے یا پھر خود کوئی کام کر رہے ہین تو ایسا محسوس ہوتا ہے کہ یہ سب کچھ پہلے بھی ہو چکا ہے . اور بعض دفعہ تو پوری فلم چلنے لگ جاتی ہے ،اس کی حقیقت سائنس کی نظر میں‌کیا ہے اس کے بارے میں‌بعد پڑھتے ہیں‌لیکن سب سے پہلے ہم مختلف نظریات کو دیکھ لیتے ہیں‌. ہندو مذہب کے مطابق جب انسان اپنی ماں‌کی کوکھ سے جنم لیتا ہے تو اس میں‌وہ تمام سوچیں‌جو والدین کے دماغ میں‌محفوظ ہوتی ہے وہ بھی منتقل ہوجاتی ہے . اس وجہ سے جب کہیں‌کوئی کام

دیکھتا ہے تو وہ پرانی سوچیں‌سامنے آجاتی ہے . بعض کہتے ہیں‌کہ یہ جنم جنم کا چکر ہے . جب کہ کچھ کا ماننا ہے کہ سوتے ہوئے ہمارے جسم سے روح نکل جاتی ہے اور دنیامیں‌گھومتی رہتی ہے . اس لئے دن میں جب کوئی کام کرتے ہیں تو روح کے زیر اثر ایسا محسوس ہوتا ہے . یہ تو کچھ نظریات تھے لیکن سائنس کے مطابق دراصل یہ ایک نفسیاتی بیماری ہے جس کے

شکار 65 فیصد سے زیادہ ہیں‌ ماہرین کے مطابق دراصل دماغ میں‌ایک خاص شریان ہے جب وہ دب جاتی ہے تو اس کے بعد ایسے احساسات بیدار ہونے لگ جاتے ہیں‌. اس بیماری کو ڈیجا ووہ

کہتے ہیں‌. جب کہ کچھ ماہرین کا کہنا ہے کہ اس کی وجہ ہمارے خواب ہے یا خواب سے پہلے جو کچھ ہم سوچتے ہیں اس کا کمال ہوتا ہے . کیونکہ دماغ ان تمام معلومات کو جمع کرتا ہے . اور وہ پھر ہمارے سامنے وقتا فوقتا لاتا ہے .

Comments

comments

کسی منظر کو دیکھنےکے بعد ایسا کیوں‌لگتا ہے کہ یہ منظر پہلے بھی ہم دیکھ چکے ہیں‌
Click to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

To Top